Tag: America

ایک دھڑ دو سر والا سانپ

April 13, 201613Apr16_BBC snake01BBC

امریکہ کی ریاست کینسس میں جیسن ٹیلبٹ نے ایک عجیب و غریب سانپ کی تصاویر لیں۔ اس سانپ کا دھڑ تو ایک تھا لیکن سر دو۔
13Apr16_BBC snake02یہ سانپ جیسن کے دوست کو جنگلوں میں دکھائی دیا اور جب جیسن کو اس کے بارے میں معلوم ہوا تو وہ اس کی تصاویر کھینچنے کے لیے بےچین ہو گئے۔
13Apr16_BBC snake03جیسن کا کہنا ہے ’میں سانپوں کا بہت شوقین ہوں اور میں نے سینکڑوں سانپوں کی تصاویر کھینچی ہیں۔ اور ایسا کرنے میں کئی بار مجھے انھوں نے ڈسا بھی۔ لیکن میری خوش قسمتی کہ کوئی بھی سانپ زہریلا نہ تھا۔‘
13Apr16_BBC snake04جیسن کے بقول اس سانپ کا ایک سر زیادہ جارحانہ تھا اور وہ دوسرے سر پر بھی حملے کر رہا تھا۔ تاہم دونوں سروں کے ایک ساتھ حرکت میں نہ آنے کے باعث جارحانہ سر کسی شے کو بھی ڈس نہیں پا رہا تھا۔
13Apr16_BBC snake05دو سر والے سانپ چند ماہ سے زیادہ زندہ نہیں رہ پاتے۔ جیسن کا کہنا ہے ’اندازہ ہے کہ دس ہزار میں سے ایک سانپ کے دو سر ہوتے ہیں۔ لیکن اس بارے میں حتمی طور پر کچھ نہیں کہا جا سکتا کیونکہ وہ جھاڑیوں میں رہنتے ہیں اور زیادہ دکھائی نہیں دیتے۔‘
13Apr16_BBC snake06سانپوں کے بارے میں انسان کے دماغ میں مختلف خیالات ہیں۔ (تمام تصاویر جیسن ٹالبوٹ کی ہیں)
Advertisements

گرفتاری نے 14 سالہ طالبعلم کی زندگی بدل دی

September 18, 2015
احمد محمد اپنے والد محمد احسان کے ساتھ — اے پی فوٹو
DU

ٹیکنالوجی کی دنیا کے بڑے نام میساچوسٹس انسٹیٹوٹ آف ٹیکنالوجی، فیس بک، ٹوئٹر اور گوگل کے درمیان اس نوعمر مسلم طالبعلم کے لیے جنگ شروع ہوگئی جسے گزشتہ روز اس وقت گرفتار کیا گیا تھا جب وہ اپنی تیار کردہ ایک گھڑی اسکول لے آیا جہاں اسے بم سمجھ لیا گیا۔
احمد محمد نامی 14 سالہ طالبعلم کو ٹیکساس کے میک آرتھر ہائی اسکول میں پیش آنے والے واقعے کے بعد ہر جانب سے حمایت ملی ہے جسے ہتھکڑیاں پہنا کر بچوں کے قید خانے میں لے جایا گیا تھا۔احمد محمد اپنی گھڑی کے ہمراہ ریاست کے شہر ارونگ میں واقع اپنے اسکول اس امید کے ساتھ گیا تھا کہ وہ اپنی اس کاوش سے اساتذہ کو متاثر کرسکے گا تاہم اسکول نے پولیس کو فون کردیا اور احمد محمد کو ہتھکڑیاں لگاکر بچوں کی جیل منتقل کردیا گیا، تاہم بعد ازاں گھڑی کی تصدیق ہونے پر اسے رہا کردیا گیا۔مگر اس ناخوشگوار تجربے نے لگتا ہے کہ اس طالبعلم کی زندگی کو بدل کر رکھ دیا ہے۔اہم امریکی ٹیکنالوجی کمپنیاں اس تخلیقی سوچ رکھنے والے طالبعلم کو اپنے ادارے کا حصہ بنانے کے لیے بے چین ہیں۔ٹوئیٹر کی جانب سے اس حوالے سے ایک ٹوئیٹ میں احمد محمد کو انٹرن شپ کی پیشکش کی گئی۔

روس نے شام میں زمینی فوج اتار دی: امریکی عہدیدار

September 10, 2015
10Sep15_AA روس01
al-Arabia

امریکی عہدیداران کا کہنا ہے کہ روس نے پچھلے ایک روز اور اس سے پہلے کے عرصے کے دوران دو ٹینک لینڈنگ کشتیاں اوراضافی طیارے شام میں بھیجے ہیں اور اس کے علاوہ چھوٹی تعداد میں بحری انفنٹری فورسز بھی تعینات کی گئی ہیں۔دو امریکی عہدیداران نے برطانوی خبررساں ایجنسی رائیٹرز کے ساتھ نام ظاہر نہ کرنے کی شرط پر بات کرتے ہوئے بتایا ہے کہ روسی فوج کی شام میں اس نقل وحرکت کے ارادے ابھی تک غیر واضح ہیں۔ ایک ذرائع کا کہنا ہے کہ ابتدائی معلومات سے یہی معلوم ہوتا ہے کہ ان فوجیوں کی توجہ شامی صدر بشار الاسد کے مضبوط گڑھ ساحلی شہر الاذقیہ کے قریب ایک نئے فضائی اڈے کی تعمیر پر ہے۔

لبنانی ذرائع
دریں اثناء شام میں جاری سیاسی اور فوجی پیش رفت سے واقف لبنانی ذرائع کا کہنا ہے کہ بدھ کے روز شام میں روسی فوجیوں نے فوجی آپریشنز میں حصہ لیا ہے اور ان فوجیوں کی تعداد ابھی تک کم ہی ہے۔
ایک ذرائع کے مطابق “روسی فوجیوں نے چھوٹی تعداد میں آپریشنز میں حصہ لینا شروع کیا ہے مگر ابھی تک بڑی فورس نے کوئی حرکت نہیں کی ہے۔ شام میں کافی تعداد میں روسی موجود ہیں مگر انہوں نے ابھی تک دہشت گردی کے خلاف جنگ میں حصہ نہیں لیا۔”ایک اور ذرائع کا کہنا تھا کہ “روسی فوجی شامیوں کے ساتھ مل کر آپریشنز میں حصہ لے رہے ہیں۔ ان کا کردار زیادہ تر مشورے دینے تک محدود ہے۔”شامی عہدیداروں نے شام میں روسی فوجیوں کے کسی قسم کے جنگی کردار کی باتوں کو مسترد کیا ہے۔ بدھ کے روز ہی ماسکو کی جانب سے جاری بیان میں کہا گیا ہے کہ روس کے فوجی ماہرین شام میں موجود تھے تاکہ دمشق کو روسی اسلحے کی کھیپ بحفاظت پہنچائی جاسکے۔روس نے شام میں موجود اپنی فوجی قوت کی تعداد اور اس کے کردار کے حوالے سے بات کرنے سے گریز کیا ہے۔ امریکی عہدیداروں کا کہنا ہے کہ حالیہ دنوں میں ماسکو نے اپنے اتحادی بشار الاسد کی مدد کے ممکنہ ارادے کے تحت شام میں اپنی موجودگی بڑھا دی ہے۔شامی وزیر اطلاعات نے اس ہفتے کے دوران کہا تھا کہ کوئی روسی فوجی شامیوں کے ساتھ محاذ جنگ پر نہیں لڑ رہا ہے۔