Category: Bombarment

حوثیوں نے دور فاروقی کی تاریخ جامع مسجد شہید کردی

October 31, 2015
31Oct15_AA مسجد01al-Arabia

العریبیہ حکومت سعودی عربیہ کا ترجمان ہے
یمن میں اہل تشیع مسلک کے ایران نواز حوثی شدت پسندوں نے ملک کے وسطی شہر اِب میں دوسرے خلیفہ راشد سیدنا عمر بن خطاب رضی اللہ عنہ کے دور خلافت میں تعمیر کی گئی جامع مسجد شہید کردی ہے۔
31Oct15_AA مسجد02مقامی ذرائع نے العربیہ ڈاٹ نیٹ کو بتایا کہ حوثی شدت پسندوں نے جامع مسجد کے ایک مینار کو اس وقت دھماکے سے اڑا دیا جب بڑی تعداد میں شہری مسجد میں نماز ادا کررہے تھے تاہم اس واقعے ہونے والے جانی نقصان کی تفصیلات سامنے نہیں آ سکیں۔
یاد رہے کہ اب کی جامع مسجد حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے دور خلافت میں تعمیر کی گئی اور اس کا مینار 900 سال پرانا بتایا جاتا ہے۔ مسجد کے مینار اور اس کے ایک بڑے حصے کو شہید کرنے کا الزام حوثیوں پر عاید کیا گیا ہے۔
یمنی محقق اور اسلامی آثار قدیمہ کے ماہر محمد القادری نے “العربیہ ڈاٹ نیٹ” کو بتایا کہ وسطی یمن کے اِب شہر میں جامع مسجد العمری دوسرے خلیفہ حضرت عمر فاروق رضی اللہ عنہ کے دور خلافت کی ایک اہم ترین تاریخی یادگار تھی۔ القادری نے کہا کہ ان کے پاس مسجد کو شہید کرنے میں حوثیوں کے ملوث ہونے کے ناقابل تردید شواہد موجود ہیں۔ مسجد کا مینار او مئذنہ حوثیوں نے مسمار کردیا ہے جس کے باعث مسجد کا ایک بڑا حصہ شہید ہوگیا ہے۔
انہوں نے کہا کہ مسجد کا مینار اس وقت ایک دھماکے سے مسجد پر اگرا جب لوگ وہاں نماز میں مصروف تھے۔ یہ حادثہ کسی قدرتی آفت،بارش یا آسمانی بجلی گرنے کا نتیجہ نہیں اور نہ ہی کوئی فضائی حملہ یہاں کیا گیا ہے۔ یہ صرف حوثیوں کی سازش ہے۔ مسجد کا جو مینار شہید ہوا ہے اس کی مرمت کچھ ہی عرصہ قبل کی گئی تھی، اس لیے اس کے خود بہ خود گرنے کا سوال ہی پیدا نہیں ہوتا۔
Advertisements

سعودی عرب: مجلس پر فائرنگ، پانچ افراد ہلاک

October 17, 2015
17Oct15_DU سعودیہDU

ریاض: سرکاری ٹیلی ویژن العریبیہ کے مطابق مشرقی سعودی عرب میں ایک مجلس پر مسلح شخص نے فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں پانچ افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوگئے ہیں
ریاض: سرکاری ٹیلی ویژن العریبیہ کے مطابق مشرقی سعودی عرب میں ایک مجلس پر مسلح شخص نے فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں پانچ افراد ہلاک جبکہ متعدد زخمی ہوگئے ہیں.ادھر الاخباریہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق ‘ایک شخص نے سیھات میں حسینیہ پر فائرنگ کی۔’رپورٹ کے مطابق فائرنگ کے باعث ایک خاتون سمیت چار افراد زخمی ہوئے جبکہ حملہ آور کی عمر 20 سال تھی تاہم حملے کے محرکات واضح نہیں ہوسکے۔تاہم ابھی یہ واضح نہیں کہ ان ہلاکتوں میں حملہ آور شامل ہے یا نہیں.خیال رہے کہ گزشتہ سال عاشورہ کے دوران الدلوہ میں مسلح شخص نے بچوں سمیت سات اہل تشیع افراد کو فائرنگ کرکے ہلاک کردیا تھا۔وزارت داخلہ کے مطابق اس واقعے میں حملہ آور کا تعلق داعش سے تھا—

RUSSIAN-MADE MISSILE SHOT DOWN MH17

October 13, 2015
13Oct15_DU ملیشیا01
NewsHub
Malaysia Airlines Flight 17 was shot down over eastern Ukraine by a Russian-made Buk missile, the Dutch Safety Board concluded on Tuesday in its final report on the crash in July 2014 that killed all 298 people on board, most of them Dutch.
But the long-awaited findings of the board, which was not empowered to address questions of responsibility, did not point the finger at any group or party for launching the missile.
A bitter war was raging in eastern Ukraine between Russian-backed separatists and Ukrainian government forces when the aircraft was downed and, amid a huge international outcry, many Western experts and governments immediately blamed the rebels.
“A 9N314M warhead detonated outside the aeroplane to the left side of the cockpit. This fits the kind of warhead installed in the Buk surface-to-air missile system,” said Safety Board head Tjibbe Joustra, presenting the report.
Russia for its part disputes that a Buk may have been used. Deputy Foreign Minister Sergei Ryabkov responded to the report by saying there had been “an obvious attempt to draw a biased conclusion, and carry out political orders”, according to Russian news agencies.
The Safety Board report said that simulations of the missile’s trajectory showed it came from somewhere in an area covering some 320 kilometres southeast of Grabovo, Ukraine — an area mostly controlled by separatists.
The makers of the Buk said their tests had shown that the aircraft could not have been hit by a missile fired from rebel-controlled territory.
Although the report did not assign blame, it is almost certain to further strain diplomatic ties between the Netherlands and its allies and Russia.
Also read: Dutch to release Malaysia Airlines Flight 17 crash report
Dutch Prime Minister Mark Rutte urged Russia to cooperate fully with a separate criminal investigation that the Netherlands is leading, with participation from Malaysia, Australia, Ukraine and Belgium.
The White House called the report an “important milestone in the effort to hold accountable those responsible”.
“Our assessment is unchanged – MH17 was shot down by a surface-to-air missile fired from separatist-controlled territory in eastern Ukraine,” National Security Council spokesman Ned Price said in a statement.
The report also seemed certain to strengthen calls within the airline industry for a review of how information is shared in conflict zones.
The board found that Ukraine should have closed the airspace over the conflict zone, and that the 61 airlines that had continued flying there should have recognised the potential danger.
It recommended international aviation rules be changed to force operators to be more transparent about their choice of routes.
However, Hennadiy Zubko, head of a separate probe by Ukraine, said Ukrainian authorities had followed the established procedure.
“All the recommendations from the ICAO (International Civil Aviation Organization) were carried out … Ukraine closed its airspace below 9,750 metres (32,000 feet),” he told journalists in Kiev.
The British pilots’ union BALPA called for states and operators to share accurate information on where it is safe to fly.
“Passengers and pilots want an open and uniform level of safety, not one that is decided in secret and in different ways by airlines and countries,” Stephen Landells, flight safety specialist at BALPA, said in a statement.
Also read: The Week Ahead – At A Glance
The safety board’s report said that a 9N314M (Buk) warhead had exploded to the left of the aircraft’s flight cabin, sending shrapnel hurtling with “tremendous force” into the plane.
The detonation killed three crew members instantly and caused the break-up of the aircraft, with the nose separating first, followed by a section of the tail and rear fuselage.
Shrapnel fragments all pointed to a ground-launched Buk missile, it said.
The victims were from the Netherlands, Malaysia, Australia, Indonesia, Britain, Germany, Belgium, The Philippines, Canada and New Zealand.
After the crash, many experts and Western governments said they believed the rebels had fired on the Malaysia Airlines plane, mistakenly believing it was a Ukrainian military transporter.
Also read: Putin Turns to Ukraine Playbook in Syria
Rutte, speaking of the separate criminal investigation, said: “In regard to our relationship with Russia, this inquiry has an enormous impact, both in the Netherlands and abroad and certainly in Russia.
“What I want to do now is appeal to the Russian authorities to respect and cooperate with this report,” he said.
“The obligation we now have is that we do all we can to ensure that those who are responsible face justice.”
At a meeting with victims’ families earlier on Tuesday, Joustra said it was likely that passengers who were not killed by the impact of the missile would have been rendered unconscious very quickly by the sudden decompression of the aircraft and the lack of oxygen at 33,000 feet.
The report said it was likely that the occupants “were barely able to comprehend the situation in which they found themselves”. None could have survived impact with the ground, it said.
Joustra spoke at the Gilze-Rijen military base where the flight cabin of the Boeing 777 has been assembled painstakingly from wreckage.

مارب کے اہم علاقہ پر عرب اتحادی فوج کا مکمل کنٹرول

October 07, 2015
07Oct15_AA ماب01al-Arabia

عدن میں خالد_بحاح اور اماراتی فوج کے ٹھکانوں پر راکٹ حملے

VIDEO

یمن کے شہر مأرب میں عرب اتحادی فوج کے کمانڈر بریگیڈئر علی یوسف الکعبی نے بتایا ہے کہ حوثی اور علی عبداللہ صالح کے حامی جنگجوؤں پر مشتمل باغیوں کے ساتھ جھڑپوں کے بعد گورنری کے مغربی علاقے میں واقع صراوح ڈائریکٹوریٹ پر قبضہ کر لیا گیا ہے۔بریگیڈئر الکعبی نے لڑائی میں حوثی ملیشیا کے متعدد جنگجوؤں کی ہلاکت اور بڑی تعداد کو زندہ گرفتار کرنے کا بھی دعوی کیا ہے۔ادھر اتحادی فوج میں شامل لڑاکا طیاروں نے دارالحکومت صنعاء کے جنوب میں واقع ضبوہ فوجی کیمپ کو نشانہ بنایا۔اسی علاقے میں السبعین پر بھی اتحادی طیاروں نے بمباری کی۔تعز شہر میں باغیوں کے متعدد ٹھکانوں پر اتحادی طیاروں کی بمباری سے حوثی اور صالح ملیشیا کے 18 باغی ہلاک ہوگئے ہیں۔میدان جنگ میں پے در پے شکست سے بےحال حوثی باغیوں نے اپنی 32 فوجی گاڑیاں لحج شہر کی شمالی مشرقی المسمیر ڈائریکٹوریٹ منتقل کر دی ہیں۔دارالحکومت صنعاء کا شمالی علاقہ زوردار دھماکے سے لرز اٹھا۔ مقامی ذرائع کا کہنا ہے کہ دھماکا صنعاء کے علاقے النہضہ کے سامنے جامع النور میں بارودی سرنگ پھٹنے سے ہوا۔

داعش کا ذمہ داری قبول کرنے کا اعلان
عراق اور شام میں برسرپیکار سخت گیر جنگجو گروپ داعش نے یمن کے جنوبی شہر عدن میں سرکاری ہیڈکوارٹرز اور سعودی عرب کی قیادت میں فوجی اتحاد کے اڈے پر تباہ کن بم حملوں کی ذمے داری قبول کرلی ہے۔ان حملوں میں پندرہ فوجی ہلاک ہوگئے ہیں۔داعش نے آن لائن جاری کردہ ایک بیان میں دعویٰ کیا ہے کہ اس کے چار خودکش بمباروں نے عدن میں دو اہداف کو نشانہ بنایا تھا۔ دو حملہ آوروں نے بارود سے لدی گاڑیوں کو القصر ہوٹل میں دھماکوں سے اڑایا ہے۔اس ہوٹل میں یمنی حکومت کے ہیڈکوارٹرز واقع ہیں۔داعش نے ان دونوں خودکش بمباروں کی شناخت ابو سعد العدنی اور ابو محمد الساحلی کے نام سے کی ہے۔داعش نے بیان میں مزید کہا ہے کہ ان حملوں میں فوجی مارے گئے ہیں مگران کی تعداد نہیں بتائی ہے۔قبل ازیں متحدہ عرب امارات کی سرکاری خبر رساں ایجنسی وام نے ٹویٹر پر یہ اطلاع دی تھی کہ یمن کے جنوبی شہر عدن میں متعدد راکٹ حملوں میں سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحاد کے پندرہ فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔یمن میں عرب اتحادی فوج کی قیادت نے عدن میں ہونے والے حملے میں ایک سعودی فوجی کے شہید ہونے کی تصدیق کی ہے۔ متحدہ عرب امارات کے جنرل کمان نے فوج کے عدن میں ایک کیمپ پر حملے میں اپنے چار فوجیوں کے ہلاک ہونے کی تصدیق کی ہے۔ اماراتی اعلان کے مطابق ان حملوں کے اس کے متعدد فوجی زخمی بھی ہوئے ہیں۔
07Oct15_AA ماب02

یمن کے نائب صدر حملے میں بال بال بچے
۔یمنی حکومت کے ایک ترجمان اور مقامی لوگوں نے بتایا کہ عدن کے مغربی حصے میں واقع القصر ہوٹل میں متعدد دھماکے ہوئے تھے۔اسی ہوٹل میں یمن کے نائب صدر اور وزیراعظم خالد بحاح کے علاوہ اعلیٰ سرکاری عہدے دار ٹھہرے ہوئے ہیں۔یمنی فوج اور اس کے اتحادیوں کے جولائی میں عدن پر دوبارہ قبضے اور وہاں سے حوثی باغیوں کی پسپائی کے بعد یہ سب سے بڑا اور تباہ کن حملہ تھا۔العربیہ نیوز چینل کی رپورٹ کے مطابق منگل کی صبح القصر ہوٹل پر راکٹ گرینیڈ فائر کیے گئے تھے اور یہ راکٹ ہوٹل کے داخلی حصے میں گرے تھے۔07Oct15_AA ماب03
عینی شاہدین نے بتایا ہے کہ ہوٹل کے گیٹ پر ایک میزائل فائر کیا گیا تھا اور ایک میزائل اس کے نزدیک گرا تھا جبکہ شہر کے علاقے البریقہ میں تیسرا میزائل گرا ہے۔العربیہ پر نشر کی گئی تصاویر میں سیاہ دھویں کے بادل بلند ہوتے دیکھے جاسکتے ہیں۔اس حملے کے بعد القصر ہوٹل کے ارد گرد سکیورٹی ہائی الرٹ کردی گئی ہے۔
07Oct15_AA ماب04
واضح رہے کہ یمن کے نائب صدر اور وزیراعظم خالد بحاح اپنی کابینہ کے سات وزراء اور دیگر اعلیٰ عہدے داروں کے ہمراہ 16 ستمبر کو سعودی عرب سے عدن واپس آئے تھے۔وہ تب سے القصر ہوٹل ہی میں مقیم ہیں اور وہیں سے کاروبار حکومت چلا رہے ہیں۔یمنی ذرائع کے مطابق وہ بم حملے میں محفوظ رہے ہیں۔خالد بحاح قبل ازیں یکم اگست کو مختصر وقت کے لیے عدن آئے تھے اور وہ پھر واپس الریاض چلے گئے تھے جہاں وہ صدر عبد ربہ منصور ہادی کے ہمراہ مقیم تھے اور وہیں سے جلاوطن حکومت چلا رہے تھے۔یمنی صدر ،وزیراعظم اور ان کی کابینہ کے ارکان مارچ میں عدن پر حوثی باغیوں کے قبضے کے بعد سعودی عرب منتقل ہوگئے تھے۔
07Oct15_AA ماب05
جولائی میں صدر منصور ہادی کی وفادار فورسز اور جنوبی مزاحمت سے تعلق رکھنے والے جنگجوؤں نے سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحاد کی فضائی مدد سے عدن اور دوسرے جنوبی شہروں پر دوبارہ کنٹرول حاصل کر لیا تھا اور وہاں سے حوثی باغیوں اور ان کی اتحادی ملیشیاؤں کو نکال باہر کیا تھا۔

یمن کے شہر تعز میں بھاری فوجی کمک پہنچ گئی

October 03, 2015
03Oct15_AA یمن01al-Arabia

باخبر یمنی ذرائع نے عرب اتحادی فوج کی جانب سے ارسال کردہ فوجی ساز وسامان اور سپاہ پر مشتمل کمک تعز شہر کے مشرقی محاذ پر بھجوانے کی تصدیق کی ہے۔ اس ضمن میں الوازعیہ ڈائریکٹوریٹ کا علاقہ خصوصی طور پر شامل ہے جہاں پر باغیوں کے ساتھ خونریز جھڑپیں ہوئیں۔ تعز کے متعدد علاقوں کا کںڑول یمن کی قومی فوج کے ہاتھ آنے کی اطلاعات کے تناظر میں سرکاری فوج کے اہلکار، ٹینک اور آرمڈ گاڑیاں کرش محور سے تعز پہنچیں ہیں
Video

س پیش رفت کے ساتھ دوسری جانب اتحادی فوج کے لڑاکا طیاروں نے #صنعاء میں صدارتی کمپاؤنڈ اور الصمع کیمپ پر حملہ کیا۔ دارلحکومت کے شمال میں ارحب سے تعلق رکھنے والے ایک #حوثی کمانڈر کے گھر پر اتحادی فوج نے حملہ کیا۔ اتحادیوں نے البیضاء کے علاقے میں واقع سپیشل ٹاسک فورس کے فوج کے کیمپ اور کھیل کے ایک میدان کو بھی اپنے فضائی حملوں کا خصوصی ہدف بنائے رکھا۔عرب اتحادی فوج کے آبنائے باب المندب پر کنڑول سے یمنی میدان جنگ میں انہیں قابل ذکر برتری حاصل ہو گئی ہے۔ اس کامیابی کے جلو میں متعدد حوثی رہنماؤں کے ہتھیار ڈالنے کی اطلاعات ہیں جبکہ اتحادی فوج کی ارسال کردہ بھاری فوجی کمک تعز کے مشرقی اور مغربی محاذوں پر پہنچنے کی اطلاعات ہیں۔عوامی مزاحمت کاروں نے تعز کے علاقے الوازعیہ الساحلیہ کے گرد حصار سخت کر دیا ہے۔ ذرائع نے امید ظاہر کی ہے کہ باغی ملیشیا اور مزاحمت کاروں کے درمیان جاری شدید جھڑپیں جلد ہی پورے علاقے پر سرکاری فوج کے قبضے کی راہ ہموار کر دیں گی۔

یمنی حکومت کا امن مذاکرات میں حصہ لینے کا اعلان

September 11, 2015
11Sep15_AA یمن01
al-Arabia

یمن کی سعودی عرب میں جلا وطن حکومت نے اقوام متحدہ کی ثالثی میں امن مذاکرات میں مشروط طور پر حصہ لینے کا اعلان کیا ہے۔یمن کے بین الاقوامی سطح پر تسلیم شدہ صدر عبد ربہ منصور ہادی کی حکومت نے جمعہ کو الریاض میں جاری کردہ ایک بیان میں کہا ہے کہ حوثی باغیوں کی اقوام متحدہ کی قرارداد کے مطابق گذشتہ سال قبضے میں لیے گئے علاقوں سے انخلاء مذاکرات میں شرکت کی بدستور ایک پیشگی شرط ہے”۔بیان کے مطابق سعودی دارالحکومت میں ایک اجلاس کے دوران یمنی حکومت کے عہدے داروں نے مذاکرات میں شرکت کی منظوری دی ہے۔ان کا مقصد قرارداد نمبر 2216 پر عمل درآمد کرانا ہوگا۔
Video

اقوام متحدہ کے یمن کے لیے خصوصی ایلچی اسماعیل ولد شیخ احمد نے جمعرات کو ایک بیان میں کہا ہے کہ ”یمن کی جلاوطن حکومت اور حوثی باغیوں نے مذاکرات میں شرکت سے اتفاق کیا ہے اور یہ مذاکرات آیندہ ہفتے خطے کے کسی شہر ہی میں ہوں گے”۔صدر منصورہادی کی حکومت نے اسماعیل ولد شیخ احمد پر زوردیا ہے کہ وہ حوثی باغیوں اور ان کے اتحادیوں سے یمنی دارالحکومت صنعا اور دوسرے علاقوں سے انخلاء کا پختہ وعدہ لیں۔حوثی شیعہ باغیوں نے ستمبر 2014ء سے صنعا اور شمالی شہروں پر قبضہ کررکھا ہے۔حوثی باغیوں نے جنوبی شہروں کی جانب بھی یلغار کی تھی لیکن وہاں سے انھیں صدر منصور ہادی کی وفادار فورسز نے حالیہ ہفتوں کے دوران پسپا کردیا ہے۔واضح رہے کہ یمن میں جاری بحران کے حل کے لیے ماضی قریب میں کی جانے والی کوششیں ناکامی سے دوچار ہوچکی ہے۔درایں اثناء سعودی عرب کی قیادت میں اتحادی ممالک کے لڑاکا طیاروں نے صنعا کے علاقے الحسبہ میں حوثی باغیوں کے ایک اسلحہ ڈپو کو فضائی حملے میں نشانہ بنایا ہے۔اسلحہ ڈپو پر بمباری کے بعد دھویں کے بادل آسمان کی جانب بلند ہوتے ہوئے دیکھے گئے ہیں۔فوری طور پر حملے میں ہونے والے جانی نقصان کے بارے میں کچھ معلوم نہیں ہوسکا۔

صنعاء پر شدید بمباری، مارب میں ماہر بارودی سرنگ ہلاک

September 07, 2015
07Sep15_AA صنعا01
al-Arabia

‘العربیہ’ نیوز چینل کے مطابق یمن میں حوثی ملیشیا کے خلاف فضائی حملوں کی قیادت کرنے والے عرب اتحاد نے شمالی صنعاء پر حملے مزید تیز کر دیئے ہیں۔سعودی عرب کی قیادت میں حملوں میں تیزی کا سلسلہ یمن میں جاری لڑائی میں متحدہ عرب امارات کے 45، سعودی عرب کے 10 اور بحرین کے پانچ فوجیوں کی ہلاکت کے بعد شروع کیا گیا ہے۔ اس سے عرب اتحادیوں نے یمن پر ابتک کی جانے والی ‘شدید ترین’ بمباری قرار دیا ہے۔
Video

سعودی اور یو اے ای کے خبر رساں اداروں کا کہنا ہے کہ اتحادی فوجیوں کی بڑے پیمانے پر ہلاکتوں کا واقعہ جمعہ کے روز پیش آیا جب حوثی باغیوں کی جانب سے داغے گئے ایک راکٹ حملے نے یمن کے مشرقی صوبے مارب کے ایک فوجی کیمپ میں گولہ بارود کے گودام تباہ کر دیا۔ ہلاک ہونے والے اماراتی اور سعودی فوجی وہیں تعینات تھے۔عرب اتحادیوں نے ہفتے کے روز اس اسلحہ ڈپو کو نشانہ بنایا جہاں سے حوثی ملیشیا نے وہ میزائل داغا کہ جس کی زد میں آ کر اتحادی فوج کے کئی درجن فوجی ہلاک ہوئے۔’العربیہ’ کے مطابق اتحادی فوج نے مارب کے سب سے بڑے اسلحہ ڈپو سمیت صنعاء میں حوثیوں کے متعدد ٹھکانے بھی تباہ کئے۔یک دوسری پیش رفت میں بین الاقوامی طور پر تسلیم کردہ آئینی صدر عبد ربہ منصور ہادی کی حامی فوج نے یمن کے جنوبی مغربی شہر تعز کے مختلف حصوں کا کنڑول حوثی باغیوں سے واپس لے لیا۔اس سال مارچ سے سعودی عرب کی قیادت میں عرب اتحاد ایرانی حمایت یافتہ حوثی ملیشیا اور منحرف صدر علی عبداللہ صالح کے وفادار باغی فوجیوں کو نشانہ بنا رہی ہے تاکہ یمن کے جلاوطن صدر کی آئینی حکومت کو دوبارہ بحال کیا جا سکے۔