Category: بحرین

یمن: اسلحہ ڈپو میں دھماکہ، متحدہ عرب امارات کے 45 فوجی ہلاک

September 05, 2015
05Sep15_BBC امارتی اموات01
DU

یمن کے سرکاری ذرائع ابلاغ کے مطابق سعودی عرب کی قیادت میں حوثی باغیوں کے خلاف کارروائیوں میں حصہ لینے والے متحدہ عرب امارات کے 45 فوجی ہلاک ہو گئے ہیں۔
دوسری جانب بحرین نے کہا ہے کہ یمن سے متصل سعودی سرحدوں کا تحفظ کرنے والے اس کے پانچ فوجی ہلاک ہو گئے ہیں تاہم اس ضمن میں مزید تفصیل فراہم نہیں کی گئی۔جمعے کو یمن میں فوج کے ذرائع کے مطابق دارالحکومت صنعا سے 250 کلومیٹر دور مشرق میں ماریب کے علاقے میں متحدہ عرب امارات کے فوجی گولہ بارود کے ایک ذخیرے میں ہونے والے دھماکے کے نتیجے میں ہوئی ہیں تاہم باغیوں نے دعویٰ کیا ہے کہ ان کے راکٹ حملے کے نتیجے میں یہ دھماکے ہوئے۔متحدہ عرب امارات کے سرکاری خبر رساں ادارے وام نے مسلح افواج کے ہیڈ کوارٹر کے حوالے سے بتایا ہے کہ یمن میں ان کے فوجی فرائض کی ادائیگی کے دوران ہلاک ہوئے ہیں۔اقوام متحدہ کے مطابق یمن میں مارچ سے سعودی کمان میں ہونے والی فوجی کارروائیوں میں45 سو افراد ہلاک ہو چکے ہیں جن میں سے 2110 عام شہری ہیں۔یمن میں حوثی باغیوں کے دارالحکومت صنعا پر قبضے کے بعد صدر منصور ہادی فرار ہو کر ساحلی شہر عدن منتقل ہو گئے تھے تاہم بعد میں حوثی باغیوں نے جب عدن کی جانب پیش قدمی شروع کی تو صدر وہاں سے فرار ہو سعودی عرب پہنچ گئے تھے۔حوثی باغیوں کی پیش قدمی پر سعودی عرب نے متعدد بار خبردار کیا تھا تاہم بعد میں اس نے یمن میں باغیوں کے خلاف فوجی کارروائیوں کا آغاز کر دیا اور کئی علاقوں کا کنٹرول دوبارہ واپس لے لیا ہے۔

بحرین: 56 شیعہ شہریوں کی شہریت منسوخ

(BBC Urdu, 13 June, 2015)
13Jun15_BBC بحرین

بحرین میں ملک کے مختلف مقامات پر مبینہ طور پر دھماکے کرنے کی منصوبہ بندی کے الزام میں 57 شیعہ شہریوں کو جیل کی سزا سنائی گئی ہے جبکہ ان میں سے ایک کے علاوہ باقی تمام کی شہریت بھی منسوخ کر دی گئی ہے۔
سرکاری خبر رساں ادارے بی این اے کے مطابق اس گروہ نے سعودی سفارت خانے سمیت ملک کے مختلف اہم اور حساس مقامات کے ساتھ ساتھ پولیس کو نشانہ بنانے کا منصوبہ تیار کیا تھا۔ بحرین میں انسانی حقوق کی تنظیموں نے اس ’غیر منصفانہ مقدمے‘ اور سزاؤں کی مذمت کی ہے۔ خلیجی ریاست میں سنہ 2011 سے شروع ہونے والے شیعہ اتحادیوں کے احتجاجی سلسلے کے بعد سے انتہائی بے چینی پائی جاتی ہے۔ گلف ڈیلی نیوز کے مطابق اس گروہ کے نشانے پر جو مقامات تھے ان میں منامہ میں سعودی سفارت خانے اور بحرین اور سعودی عرب کو ملانے والی اہم شاہ فہد شاہراہ شامل تھی۔
13Jun15_BBC بحرین02 عدالت نے دعویٰ کیا ہے کہ شیعہ حزب مخالف کی تنظیم ال وفاق اور کالعدم جماعت ال وفا ان افراد کی مالی مدد کر رہی تھیں۔ بحرین کی دو انسانی حقوق کی تنظیموں نے اپنے بیان میں کہا ہے کہ مجرم قرار دیے جانے والے افراد میں سے نو افراد کی عمریں 18 سال سے کم ہیں۔ امیریکنز فار ڈیموکریسی اینڈ ہیومن رائٹس کے حسین عبداللہ کا کہنا ہے کہ’بحرین کی سیاسی عدالتیں غیر منصفانہ جیل کی سزاؤں سے بحرین کی پوری نسل کے حقوق ضبط کر رہی ہیں۔ واضح رہے کہ جنوری میں بحرین ملکی امن و امان خراب کرنے کے الزام میں 72 افراد کی شہریت منسوخ کر چکا ہے۔

بحرین میں آل خلیفہ کے ہاتھوں بےگناہ عوام کی گرفتاریوں پر عالمی حلقوں نے گہری تشویش کا اظہار کیا ہے

04Apr15_ABNAبحرین گرفتاریاںABNA_BU

ابنا ۔ کی رپورٹ کے مطابق اب مغربی ملکوں میں انسانی حقوق کی تنظیمیں بھی آل خلیفہ کے مظالم کے خلاف احتجاج کرنے لگی ہیں- یاد رہے کہ مغربی ملکوں کی انسانی حقوق تنظیموں نے اپنی حکومتوں کی طرح آل خلیفہ کی ظالمانہ پالیسیوں پر خاموشی اختیار کررکھی تھی- قابل ذکر ہے کہ ہیومن رائٹس واچ نے بحرین کے انسانی حقوق کے اہم کارکن نبیل رجب کی رہائی کا مطالبہ کیا ہے- آل خلیفہ نے کئی مہینوں قبل بھی نبیل رجب کو گرفتار کیا تھا- ہیومن رائٹس واچ میں مشرقی وسطی اور شمالی افریقہ کے عھدیدار جو اسٹارک نے آل خلیفہ کے اتحادیوں بالخصوص امریکہ اور برطانیہ سے مطالبہ کیا ہے کہ بحرین کی شاہی حکومت پر نبیل رجب کو رہا کرنے کے لئے دباؤ ڈالیں- واضح رہے کہ نبیل رجب کو محض اس وجہ سے گرفتار کیا گیا کہ انہوں نے اپنے ٹوئٹر اکاونٹ پر آل خلیفہ کے کارندوں کے ہاتھوں قیدیوں کو پہنچائی جانے والی جسمانی ایذاؤں پر تشویش کا اظہار کیا تھا- ادھر آل خلیفہ کی ایک نام نہاد عدالت نے جمعیت الوفاق کے سیکریٹری جنرل شیخ علی سلمان کی مدت حراست میں بائیس اپریل تک توسیع کردی ہے- شیخ علی سلمان کو بحرینی قوم کے حقوق اور ان کی آزادی اور انصاف پسندی کے مطالبے کی بنا پر گرفتار کرکے جیل میں ڈال دیا گیا ہے- شیخ علی سلمان، اٹھائیس دسمبر سے قید میں ہیں- آل خلیفہ نے انہیں رہا کرنے کی قومی اور بین الاقوامی اپیلوں کو مسترد کردیا ہے- واضح رہے کہ بحرین میں آل خلیفہ نے بڑے پیمانے پر سیاسی رہنماؤں کو گرفتار کرنا شروع کردیا ہے- بتایا جاتا ہے کہ تمام رجسٹرڈ سیاسی پارٹیوں کے رہنما اس وقت آل خلیفہ کی کال کوٹھریوں میں قید و بند کی صعوبتیں برداشت کر رہے ہیں- مبصرین کا کہنا ہےکہ آل خلیفہ کے یہ اقدامات انسانی حقوق، عالمی قوانین اور آزادی بیان کے منافی ہیں- آل خلیفہ کی حکومت نے چار برسوں قبل عوامی تحریک شروع ہونے کے بعد سے ہزاروں سیاسی رہنماؤں اور کارکنوں کو جیلوں میں ڈال رکھا ہے- ملت بحرین اپنے حقوق کی بازیابی اور آل خلیفہ کی جاہلانہ امتیازی پالیسیوں کے خلاف احتجاج کررہی ہے- آل خلیفہ کی کال کوٹھریوں میں ایک سو پچاس بچے بھی قید ہیں جبکہ دو سو افراد، آل خلیفہ کے کارندوں کے ہاتھوں جسمانی ایذاؤں اور ناروا سلوک کی بنا پر معذور بن چکے ہیں- آل خلیفہ کے ہاتھوں سیاسی رہنماؤں اور بے گناہ عوام کی گرفتاری اور انہیں جسمانی ایذائیں پہچانا نیز سیاسی تنظیموں پر پانبدیاں لگانا ایسے امور ہیں کہ جن سے آل خلیفہ کی شاہی حکومت کی ظالمانہ حقیقت سامنے آجاتی ہے