Category: آسٹریلیا

پاکستان میں داعش کی موجودگی کے امکانات رد

November 15, 2015DI_00DU

اسلام آباد: پاکستان نے خود ساختہ دولت اسلامیہ (داعش) کی ملک میں موجودگی کے امکانات مسترد کر دیے۔
سیکریٹری خارجہ اعزاز چوہدری نے اتوار کو ایک انٹرویو میں کہا کہ پاکستان میں کسی کو داعش کے ساتھ روابط قائم کرنے کی اجازت نہیں دی جائے گی۔
DI_01چوہدری نے کہا کہ پاکستان داعش سمیت کسی بھی انتہا پسند تنظیم سے لاحق تمام خطرات سے نمنٹے کی مکمل صلاحیت رکھتا ہے۔ ’پاکستان اپنی عوام کی مکمل حمایت کے ساتھ دہشت گردی کے خلاف جنگ جیت رہا ہے‘۔
DI_02دوسری جانب، سپیکر قومی اسمبلی ایاز صادق نے کہا ہے کہ پاکستان دہشت گردی اور شدت پسندی کو نفرت کی نگاہ سے دیکھتا ہے اور وہ پیر س سانحہ پر فرانس کی حکومت اور عوام کے ساتھ کھڑا ہے۔
DI_04دفتر خارجہ کے زیر اہتمام ایک تقریب سے خطاب میں صادق نے کہا کہ ایک دہائی سے زائد خود دہشت گردی کا نشانہ رہنے والا پاکستان دکھ اور تکلیف کی گھڑی میں فرانسیسی عوام کے ساتھ ہے۔جدید انسانی تہذیب کیلئےدہشت گردی کو ایک مشترکہ چیلنج قرار دیتے ہوئے صادق نے کہا کہ اس طرح کے حملے کوئی مذہبی یا اخلاقی جواز نہیں رکھتے۔
DI_05سپیکر قومی اسمبلی نے دہشت گردی کو ختم کرنے کیلئے مشترکہ عالمی کوششوں پر زور دیتے ہوئے کہا کہ پاکستان نے غیر معمولی سٹریٹیجک اقدامات کے ذریعے جرات مندی سے اس لعنت کا مقابلہ کیا۔صادق نے بتایا کہ پاکستان اس لڑائی میں عالمی برادری کی مدد کیلئے تیار ہے۔
DI_03

آسٹریلین جہادیوں کی شہریت ختم ہو سکتی ہے

27May15_BBC آسٹریلین جہادی01BBC_Orig

آسٹریلیا میں نئے حکومتی قوانین کے تحت دہشت گرد تنظیموں میں شامل کم از کم 50 آسٹریلوی باشندوں کو شہریت سے محروم کیا جا سکتا ہے۔
حکومت جلد ہی ایسی قانون سازی کرے گی جس کے تحت عراق یا شام میں لڑنے والوں کی آسٹریلین شہریت ختم کر دی جائےگی۔ سنہ 2014 کے وسط سے دولت اسلامیہ میں شامل آسٹریلوی شہریوں کے بارے میں تشویش کا اظہار کیا جا رہا ہے۔ وزیراعظم ٹونی ایبٹ کا کہنا ہے کہ یہ قانون جون میں پارلیمنٹ کے سامنے پیش کیا جائے گا اور یہ ’دہشت گردی سے نمٹنے سے متعلق ہے۔ منگل کو کینبرا میں پریس کانفرنس سے خطاب کرتے ہوئے انھوں نے کہا: ’ہمیں ان کی جانب سے بڑھتا ہوا خطرہ محسوس ہو رہا ہے جو ہم میں ہی موجود ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ کم از کم 100 آسٹریلین شہری مشرق وسطیٰ میں میں لڑ رہے ہیں اور ان میں سے تقریباً نصف دہری شہریت کے حامل ہیں۔ اس کے علاوہ مزید 150 افراد آسٹریلیا میں ایسی تنظیموں کی حمایت کر رہے تھے جبکہ آسٹریلیا کی انٹیلی جنس ایجنسی اے ایس آئی او دہشت گردی سے متعلق 400 سے زائد مقدمات کی تفتیش کر رہی ہے۔ وزیراعظم ایبٹ کا کہنا ہے کہ ’ملکی سلامتی کے حوالے سے یہ سب سے بڑا چیلنج ہے جس کا سامنا ہم اپنی زندگیوں میں کر رہے ہیں۔ حکام مشرق وسطیٰ کے شورش زدہ علاقوں سے واپس آنے والوں کے ساتھ ساتھ ان کو اور ان کی سرگرمیوں کی حمایت کرنے والوں کی وجہ سے مقامی سکیورٹی پر اثرات کے بارے میں بھی تشویش زدہ ہیں۔ 27May15_BBC آسٹریلین جہادی02آسٹریلیا میں بیرون ملک جا کر لڑنے کی منصوبہ بندی کے شبے میں پاسپورٹ ضبط کرنے کا قانون موجود ہے۔ تقریباً 100 پاسپورٹ قومی سلامتی کی بنیاد پر منسوخ کیے جا چکے ہیں۔ وزیراعظم ٹونی ایبٹ کا کہنا تھا کہ حکومت اس امر کو یقینی بنائے گی کہ کوئی بھی غیر ریاستی نہ بنے اور شہریت منسوخ کرنے کا فیصلہ عدالتی جانچ کے تحت کیا جائے۔ شہریت سے قطع نظر دہشت گردی میں ملوث افراد کو قید کیا جائے گا۔ ان کا کہنا تھا کہ اگر ان کے پاس آسٹریلین شہریت نہیں ہو گی تو انھیں ملک سے بے دخل کیا جا سکتا ہے۔ لیکن کوئی بھی اپنی شہریت کسی جرم میں مجرم قرار دیے جانے بغیر بھی محروم ہو سکتا ہے۔ اس قانون میں دوسری نسل سے تعلق رکھنے والے آسٹریلین شہریوں کے لیے بھی کچھ حصے ہو سکتے ہیں کیونکہ حکومت اس امر کی جانب توجہ دے رہی ہے کہ وہ افراد جو کسی دوسرے ملک کی شہریت حاصل کر سکتے ہیں لیکن ان کے پاس اس ملک کی شہریت نہیں ہے تو کیا انھیں بھی شہریت سے محروم کیا جا سکتا ہے۔