زلزلے سے ہلاکتوں کی تعداد 267 ہوگئی

October 29, 201529Oct15_DU زلزلہDU

اسلام آباد: پاکستان کے شمالی علاقوں میں پیر کو آنے والے زلزلے کے نتیجے میں ہلاکتوں کی تعداد 267 جبکہ زخمیوں کی تعداد 1856 ہوگئی ہے۔
نیشنل ڈزاسٹر مینجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) کے مطابق زلزلے میں 11389 گھروں کو نقصان بھی پہنچا جبکہ خیبر پختونخوا اس سے سب سے زیادہ متاثر ہوا جہاں 220 اموات واقع ہوئیں۔این ڈی ایم اے کے مطابق صوبے میں 1656 افراد زخمی بھی ہوئے جبکہ 10586
گھروں کو نقصان پہنچا۔
29Oct15_DU 02 زلزلہ
متاثرہ اضلاع کی فہرست
خیبر پختونخوا
گلگت بلتستان
پنجاب
آزاد جموں و کشمیر
فاٹا
زلزلہ زدگان کے لیے امدادی پیکیج کا اعلان
دوسری جانب وزیر اعظم نواز شریف نے حالیہ زلزلے کے متاثرین کے لیے پیکیج کا باقاعدہ اعلان کر دیا۔
Nawaz Sharif
گورنر ہاؤس، پشاور میں زلزلے کے نقصانات کے حوالے سے اجلاس کے بعد وزیراعظم نواز شریف نے ہلاک شدگان کے لواحقین کے لیے 6 لاکھ روپے، زخمی افراد کے لیے ایک لاکھ روپے جبکہ معذور ہونے والے افراد کے لیے 2 لاکھ روپے امداد مختص کرنے کا اعلان کیا.
یہ بھی پڑھیں : پاکستان میں شدید زلزلہ
وزیراعظم کا کہنا تھا کہ مکمل تباہ ہونے والے گھروں کی تعمیر کے لیے 2 لاکھ روپے دیئے جائیں گے جبکہ جزوی طور پر متاثر گھروں کی مرمت کے لیے ایک لاکھ روپے معاوضہ دیا جائے گا۔نواز شریف کا کہنا تھا کہ زلزلہ متاثرین کی تصدیق کا عمل 4 روز میں مکمل کر لیا جائے گا، متاثرین کو معاوضے کی ادائیگی کا عمل پیر سے شروع ہوگا اور یہ عمل آئندہ جمعرات تک مکمل کر لیا جائے گا۔انہوں نے کہا کہ زلزلہ متاثرین کو چیک کےذریعے امدادی رقم دی جائے گی، معاوضے کا چیک بینک سے فوری طور پر کیش کروایا جا سکے گا جبکہ معاوضے کی تقسیم کا عمل تمام اضلاع میں بیک وقت شروع کیا جا رہا ہے۔
مزید پڑھیں : جب زلزلہ آئے تو کیا کرنا چاہیے؟
وزیر اعظم نے زلزلہ متاثرین کی تصدیق اور امداد کی تقسیم میں شفافیت کے لیے کے لیے 3 رکنی کمیٹی بنانے کا بھی اعلان کیا۔نواز شریف نے مزید کہا کہ کمیٹی متاثرہ خاندانوں کے نقصان کے حوالے سے تصدیق کرے گی جبکہ اس میں انتظامیہ اور مقامی نمائندے کے علاوہ فوج کا نمائندہ بھی شامل ہوگا۔امداد کے حوالے سے انہوں نے مزید کہا کہ یہ پیکیج وفاقی اور صوبائی حکومت نے مشترکہ طور پر ترتیب دیا ہے جس میں 50 فیصد مرکزی حکومت اور 50 فیصد خیبر پختونخوا کی حکومت دے گی۔وزیر اعظم نے کہا کہ امدادی پیکیج میں خیبر ختونخوا، فاٹا اور گلگت بلتستان شامل ہیں اور متاثرین کی مدد کے لیے وبائی حکومت کا بھر پور ساتھ دیں گے۔
یہ بھی پڑھیں : پاکستان میں زلزلوں کی تاریخ
ان کا کہنا تھا کہ موسم کی شدت کے پیش نظر زلزلہ متاثرین کی فوری امداد ضروری ہے اور برفباری سے قبل امدادی سرگرمیوں کو مکمل کر لیا جائے گا۔نواز شریف نے کہا کہ فاٹا میں امدادی سرگرمیاں وفاق کی ذمہ داری ہے، البتہ اگر صوبائی حکومت اس میں حصہ ڈالنا چاہے تو اس کا خیر مقدم کیا جائے گا۔زلزلے کے نقصانات کے حوالے سے انہوں نے بتایا کہ زلزلے سے خیبر پختونخوا میں 208 اور فاٹا میں 29 افراد لقمہ اجل بنے۔
مزید پڑھیں : تباہ کن زلزلے سے ہلاکتوں میں اضافہ
وزیر اعظم کا کہنا تھا کہ شدید زلزلے کے باوجود جانی نقصان کم ہوا اور نیشنل ڈیزاسٹر مینیجمنٹ اتھارٹی (این ڈی ایم اے) امدادی کاموں میں بھر پور حصہ لے رہی ہے۔میڈیا بریفنگ کے بعد وزیر اعظم نواز شریف پشاور سے چترال کے دورے کے لیے روانہ ہوئے۔
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s