افغانستان، پاکستان، انڈیا میں شدید زلزلہ، درجنوں ہلاک

October 26, 2015
26Oct15_BBC زلزلہ01BBC

امریکی جیولوجیکل سروے کے مطابق پاکستان، افغانستان اور انڈیا کے مختلف علاقوں میں ریکٹر سکیل پر 7.5 شدت کا زلزلہ آیا ہے۔
امریکی جیولوجیکل سروے کے مطابق زلزلے کا مرکز ہندو کش کا پہاڑی علاقہ ہے جو کہ ڈسٹرکٹ جرم جنوب مغرب میں 45 کلومیٹر دور واقع ہے۔پاکستانی میڈیا میں آنے والی اطلاعات کے مطابق ابھی تک مختلف علاقوں سے کم از کم تیس افراد کی ہلاکت کی اطلاع آئی ہے۔پاکستان کے زلزلہ پیما مرکز کا کہنا ہے کہ زلزلہ پاکستانی وقت کے مطابق 2:09 منٹ پر آیا۔ زلزلے کی وجہ سے مختلف علاقوں میں کچے مکانات منہدوم ہو گئے ہیں۔زلزلے سے خوف زدہ شہری کھلے آسمان تلے

صوبہ خیبر پختون خوا کے وزیر اعلی پرویز خٹک کا کہنا ہے کہ اس وقت تک کی اطلاعات کے مطابق صوبے کے محتلف علاقوں میں ہلاک ہونے والوں کی تعداد 30 پوگئی ہے جبکہ درجنوں افراد زخمی ہیں۔میڈیا کے نمائندوں سے بات کرتے ہوئے اُنھوں نے کہا کہ صوبے کے مختلف علاقوں سے نقصان سے متعلق معلومات اکھٹی کرر ہے ہیں۔ وزیر اعلی کا کہنا تھا کہ صوبائی حکومت کسی بھی ہنگامی صورت حال سے نمٹنے کے لیے تیار ہے

پاکستان کے زیرِ انتظام کشمیر سے بھی ایک فرد کی ہلاکت کی اطلاعات ہیں۔پشاور کے لیڈی ریڈنگ ہسپتال کے ترجمان کے مطابق ہسپتال میں ایک شخص کی لاش لائی گئی ہے اور کم سے کم 96 افراد زخمی ہیں۔اگرچہ بظاہر ایسا لگتا ہے کہ زلزلے سے سب سے زیادہ تباہی خیبر پختوانخوا کے علاقے میں ہوئی ہے لیکن پاکستان کے دارالحکومت اسلام آباد سمیت ملک کے مختلف شہروں میں شدید زلزلے کے جھٹکے محسوس کیے گئے ہیں۔

لاہور میں بی بی سی کی نامہ نگار نے بتایا کہ زلزلے کے فوراً بعد ٹیلیفون لائنز بند ہو گئیں۔دہلی میں میٹرو ٹرین بھی تھوڑی دیر کے لیے رک گئی تھی۔انڈیا کے وزیراعظم نریندرا مودی نے اپنے ٹویٹ میں کہا ہے کہ انھوں نے نقصان کا تخمینہ لگانے کے لیے فوری حکم دیا ہے۔
26Oct15_BBC زلزلہ02انھوں نے یہ بھی کہا کہ وہ پاکستان، بھارت اور افغانستان میں سب کی خیریت کی دعا کرتے ہیں اور ہم، پاکستان اور افغانستان سمیت ہر جگہ مدد کے لیے تیار ہیں۔بھارت میں ریلویز کے وزیر سوریش پربھو نے ٹویٹ کیا ہے کہ انھوں نے زلزلے کے بعد ریلویز کے تمام ملازمین کو، تمام حفاظتی اقدام لینے اور ہوشیار رہنے کے لیے کہا ہے۔بی بی سی کے پشاور میں نامہ نگار کے مطابق شہر کے مختلف علاقوں میں مکانات کے نقصان اور منہدم ہونے کی اطلاعات موصول ہو رہی ہیں۔

ڈبگری میں امان ہسپتال میں زلزلے کے بعد شارٹ سرکٹ کے باعث آگ لگ گئی۔ تاہم کسی جانی نقصان کی اطلاع نہیں ملی۔پاکستان کے صوبے گلگت بلتسان کے وزیر داخلہ کا کہنا ہے کہ ہنزہ اور نگر کے علاقے میں زلزلے کے بعد مٹی کے تودے گرے ہیں۔ابھی تک ایک بچی کی ہلاکت کی تصدیق ہوئی ہے۔ علاقے کا جائزہ لینے کے لیے فوج کی ہیلی کاپٹر منگوائے جا رہے ہیں۔پاکستان فوج کے ترجمان عاصم باجوہ نے کہا ہے کہ پاکستان میں آنے والے زلزلے کے بعد فوج، اور ہیلی کاپٹر حرکت میں آگئے ہیں جبکہ سی ایم ایچ ہسپتال اور ماہر امدادی کارکنوں کو ہائی الرٹ کر دیا گیا ہے۔

پاکستان کے صوبے پنجاب کے ڈائریکٹر جنرل ریسکیو بریگیڈیئر ڈاکٹر اشرف کے مطابق صوبے میں 14 افراد زخمی ہوئے ہیں۔ ان کا کہنا تھا کہ اب تک لاہور میں کسی بھی شخص کے ہلاک ہونے کی اطلاع نہیں ہے۔انھوں نے بتایا کہ ریسکیو سروسز ہائی الرٹ پر ہیں۔افغانستان کے شمال مشرقی صوبے علاقے تخار میں حکام کے مطابق زلزلے میں کم از کم 10 افراد ہلاک اور 25 زخمی ہو گئے ہیں۔ گورنر کے ترجمان نے بی بی سی کو بتایا کہ سبھی متاثرین ایک ہائی سکول کی لڑکیاں تھیں۔ زخمیوں میں سے بھی سات کی حالت نازک بتائی گئی ہے۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s