یمنی حکومت مذاکرات اور حوثی یو این فیصلہ ماننے پر تیار

October 19, 2015
19Oct15_BBC AA حوشی01al-Arabia

یمن کی آئینی حکومت نے اقوام_متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون کی دعوت پر جنیوا میں یمن کے بحران کے حل کے سلسلے میں ہونے والے دوسرے اجلاس میں شرکت پر آمادگی کا اظہار کیا ہے۔العربیہ ٹی وی کے ذرائع کے مطابق یمنی حکومت نے جنرل سیکرٹری بان کی مون کی دعوت قبول کرتے ہوئے جنیوا اجلاس میں شرکت کی تیاریاں شروع کردی ہیں۔خیال رہے کہ ہفتے کو اقوام متحدہ کے سیکرٹری جنرل بان کی مون نے یمن کے لیے خصوصی ایلچی اسماعیل ولد الشیخ احمد کے ذریعے صدر عبد ربہ منصور_ھادی کے نام ایک پیغام ارسال کیا تھا جس میں ان سے دوسرے جنیوا اجلاس میں شرکت کرنے اور باغیوں کے ساتھ بات چیت کی اپیل کی تھی۔’یو این’ سیکرٹری جنرل کی جانب سے یمنی صدر منصور ھادی کو بھیجے گئے پیغام میں کہا گیا تھا کہ #حوثی باغی اور ان کے دیگر حامی بات چیت پر آمادگی کے ساتھ سلامتی کونسل کی قرارداد 2216 پر عمل درآمد پر بھی تیار ہیں۔ بان کی مون کا کہنا تھا کہ باغیوں کے ساتھ ہونے والی مشاورت میں انہوں نے اقوام متحدہ کی تمام قراردادوں اور خلیجی امن فارمولے پرعمل درآمد کی یقین دہانی کرائی ہے۔قبل ازیں ہفتے کو یو این سیکرٹری جنرل بان کی مون کی جانب سے صدر ھادی کے نام بھیجے گئے ایک مکتوب میں ان سے دوسرے جنیوا اجلاس میں شرکت کی اپیل کی تھی۔ بان کی مون کے مکتوب کے مطابق باغی گروپ حوثی یمن میں قیام امن کے بارے میں سلامتی کونسل کی قرار داد 2216 پر عمل درآمد کےساتھ ساتھ بحران کے حل کے لیے خلیجی ممالک کے وضع کردہ فریم ورک پر عمل درآمد کے لیے بھی تیارہیں۔

العربیہ ٹی وی کی رپورٹ کے ذرائع کے مطابق اقوام متحدہ کے یمن کے لیے خصوصی ایلچی اسماعیل ولد الشیخ احمد نے صدر ھادی کو بان کی مون کا یہ پیغام پہنچایا تھا جس کے بعد حکومت نے 48 گھنٹے میں اس کا جواب دینے کا اعلان کیا تھا۔ اقوام متحدہ کے خصوصی مندوب ان دنوں ابو ظہبی، ریاض اور مسقط میں یمنی حکومت اور باغیوں کے درمیان مفاہمتی مساعی میں مصروف ہیں۔

جمعہ کی شام اقوام متحدہ کے امن مندوب نے ریاض میں یمن کے نائب صدر اور وزیراعظم خالد بحاح سے بھی ملاقات کی تھی۔ ملاقات کے دوران نائب صدر کا کہنا تھا کہ ان کی تمام تر توجہ یمن میں جاری خون خرابہ، قتل عام اور بربادی روکنے پر مرکوز ہے۔انہوں نے کہا کہ یمنی حکومت اپنے کے کسی ایک چپے سے بھی دستبردار نہیں ہوگی۔ حکومت ہی #صعدہ سے المھرہ تک کی ذمہ دار اور جواب دہ ہے اور ہم پورے ملک میں امن واستحکام کے لیے مساعی کررہے ہیں۔اس موقع پراقوام متحدہ کے مندوب ولد الشیخ نے حوثی باغیوں کی جانب سے عدن میں حکومتی مراکز میں کیے گئے بم دھماکوں کی مذمت کرتے ہوئے انہیں بزدلانہ قرار دیا۔

ادھر یمن میں امن وامان کے حوالے سےقائم کردہ سیاسی کمیٹی کے سربراہ اور وزیرمملکت عبداللہ الصیادی نے بھی اقوام متحدہ کے امن مندوب سے ملاقات کی۔ سیاسی کمیٹی میں صدر ھادی، وزیراعظم بحاح اور ان کی کابینہ کے متعدد وزیر بھی شامل ہیں تاہم کمیٹی کی قیادت ایک وزیرکے پاس ہے۔سیاسی کمیٹی نے بھی ملک میں مزید بدامنی جاری رہنے پر تشویش کا اظہار کرتے ہوئے کہا کہ حوثیوں اور علی صالح کی حامی ملیشیا قتل عام اور خون خرابے کی ذمہ دار ہے۔ باغی مذاکرات کے حوالے سے اپنی مرضی کی شرائط عاید کرکے سیاسی مساعی کو سبوتاژ کررہے ہیں۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s