سماجی کارکن سبین محمود کا ڈرائیور بھی قتل

September 08, 2015
سبین محمود
DU

کراچی: سماجی کارکن سبین محمود کے ڈرائیور اور ان کے قتل کے عینی شاہد غلام عباس کو کراچی میں قتل کردیا گیا۔
کراچی: سماجی کارکن سبین محمود کے ڈرائیور اور ان کے قتل کے عینی شاہد غلام عباس کو کراچی میں قتل کردیا گیا۔پولیس کانسٹیبل غلام عباس جو سبین محمود کے ڈرائیور بھی تھے، کو کراچی کے علاقے کورنگی میں فائرنگ کرکے ہلاک کیا گیا۔پولیس کے مطابق غلام عباس نماز پڑھ کر گھر واپس آرہے تھے کہ راستے میں موٹر سائیکل سوار حملہ آروں نے اُن پر فائرنگ کردی جس کے نتیجے میں انہیں نائن ایم ایم پستول کی دو گولیاں لگیں.
08Sep15_DU سبین ڈرائیور

سبین محمود سپرد خاک، قتل کا مقدمہ درج،امریکا کی مذمت
اپریل 2015 میں سبین محمود کو اُس وقت قتل کیا گیا تھا جب وہ دی سیکنڈ فلور (ٹی ٹو ایف) میں بلوچستان میں گمشدہ افراد سے متعلق ایک سیمنار سے خطاب کے بعد واپس لوٹ رہی تھیں۔اس سیمنار میں گمشدہ بلوچ افراد کی بازیابی کے لیے سرگرم ماما قدیر کو بھی مدعو کیا گیا تھا۔

سبین مولاناعزیزکے خلاف مہم پر نشانہ بنی
انسداد دہشت گردی کے محکمے کے افسر راجہ عمر خطاب نے کہا کہ غلام عباس قتل کے حوالے سے ایک اہم گواہ تھے جبکہ انہوں نے اس قتل کے دیگر گواہوں کی حفاظت پر زور دیا۔انہوں نے اس قتل کو ٹارگٹ کلنگ کا واقعہ قرار دیتے ہوئے بتایا کہ غلام عباس سبین پر حملے کے وقت گاڑی کے پیچھے والی سیٹ پر بیٹھے ہوئے تھے جبکہ سبین خود گاڑی چلا رہی تھیں۔تاہم ان کا مزید کہنا تھا کہ عباس کے قتل سے سبین قتل کیس پر فرق نہیں پڑے گا کیوں کہ شناختی پریڈ کے دوران ملزمان کی نشاندہی پہلے ہی ہوچکی ہے۔ سبین محمود ٹی ٹوفاونڈیشن کی ڈائریکٹر کے علاوہ سول سوسائٹی کی سرگرم کارکن بھی تھیں۔
Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s