ڈیوڈ کیمرون کا ہزاروں شامی پناہ گزینوں کو برطانیہ میں پناہ دینے کا اعلان

September 05, 2015
05Sep15_AN پناہ02
اس خبر کا ماخذ مختلف اخبارات ہیں۔

بلینوں ڈالر کے اثانے رکھنے والے کسی مسلمان حکمران کو یہ توفیق نہیں ہوئی مگر ایک یہودی نے ان در بدر لوگوں پر رحم کھایا۔
لندن: سمندر میں ڈوب کر جان بحق ہونے والے تین (3) سالہ شامی بچے کی تصویر منظر عام پر آنے کے بعد برطانوی وزیراعظم ڈیوڈ کیمرون نے برطانیہ میں ہزاروں شامی پناہ گزینوں کو پناہ دینے کا اعلان کیا ہے۔ شامی تنازع اور تارکین وطن کے بحران پر ڈیوڈ کیمرون کا کہنا تھا کہ اس بحران کی شدت اور لوگوں کی تکالیف کو دیکھتے ہوئے اپنے تفصیلی منصوبے کے تحت تارکین وطن کیلئےپہلے سے موجود اسکیموں میں ہزاروں شامی باشندوں کو پناہ دی جائیگی۔ انہوں نے کہا کہ یہ ان کی اخلاقی ذمہ داری بنتی ہے کہ داعش کی سرگرمیوں سے متاثرہ لوگوں کی مدد کی جائے۔ ڈیوڈ کیمرون نے کہا کہ اس ضمن میں ایک تفصیلی منصوبے پر کام ہو رہا ہے۔ اور انہیں متاثرہ افراد کی جگہ کی منتقلی کے پروگرام کے تحت برطانیہ میں بسایا جائیگا۔ اس اسکیم میں پہلے ہی 216 افراد شام سے برطانیہ آچکے ہیں۔ اس سے قبل انہوں نے مزید تارکیں وطن کو پناہ دینے سے انکار کردیا تھا۔ لیکن حالیہ دنوں سمندر کے ذریعے یورپ آنے والے شامی عراقی اور لیبیائیباشندوں کی افسوس ناک خبروں اور تصاویر نے رائے عامہ ہموار کرنے میں مدد دی۔ اور خصوصاً ترکی کے ساحل پر تین (3) سالہ ایلان کردی کی لاش کی تصاویر نے پوری دنیا کو سکتے میں ڈال دیا ہے۔ دوسری جانب آئس لینڈ تقریباً اا ہزار تارکین وطن خاندان کو اپنے ملک میں رکھنے پر آمادگی ظاہر کرچکا ہے۔ جب کہ اس بحران کا ایک پہلو بنگری کی سرحد پر نمایان ہیں۔ جہاں تارکین وطن موجود ہین اور ہنگری کے وزیراعظم وکٹر اوربن بیان دے چکے ہیں کہ ان کا ملک مزید مسلمانون کو قبول نہیں کرگا۔ انہون نے خبردار کیا لاکھوں تارکین وطن سے خود یورپی آبادی اقلیت کا شکار ہو جائیگی۔

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s