COME VISIT ME IN OCTOBER, OBAMA INVITES NAWAZ

31Aug15_NH بلاوا

Rice meets PM to convey concerns over attacks launched by militants based in Pakistan * Calls for Pakistan’s enhanced role in Afghan reconciliation process
WASHINGTON/ISLAMABAD: United States (US) President Barack Obama has invited Prime Minister Nawaz Sharif to visit the White House in October, US National Security Adviser Susan Rice tweeted on Sunday.
Rice travelled to Pakistan to meet senior officials to “advance our mutual interests and address areas of concern, particularly terrorist and militant attacks emanating from Pakistani soil”, a senior US official said.Rice met the PM to press concerns over attacks launched by militants based in Pakistan, the US officials said.The visit to Islamabad, part of an Asian tour that included an earlier stop in China, comes amid uncertainty over whether the United States will release $300 million in military aid to Pakistan.
Media reports have suggested the money could be held back if the US determines Pakistan is not doing enough to fight the Haqqani network, which has launched some of the deadliest attacks in neighbouring Afghanistan.
Rice “will address areas of mutual interest and of concern, including terrorist and militant attacks emanating from Pakistani soil”, seeking anonymity, a senior US official said.
The official said Rice’s visit was not in response to recent escalating tension between Pakistan and archrival India, who cancelled planned peace talks last weekend. Nine people were killed during an exchange of fire on Friday along a border disputed by India and Pakistan.

سوزن رائس کی وزیر اعظم نواز شریف سے ملاقات

Untitled
Khabrain

اسلام آباد (خبریں ویب ڈیسک ) امریکا کی قومی سلامتی کی مشیر سوزن رائس نے آج پاکستانی وزیراعظم نواز شریف سے ملاقات کی ہے، جس میں پاکستانی سرزمین استعمال کرتے ہوئے عسکریت پسندوں کے بیرون ملک مبینہ حملوں پر بھی بات چیت کی گئی ہے۔امریکی قومی سلامتی کی مشیر سوزن رائس ایشیا کے دورے پر ہیں، جہاں ان کی پہلی منزل چین تھی۔ آج اسلام آباد کا ایک روزہ دورہ وہ ایک ایسے وقت میں کر رہی ہیں، جب یہ بات بھی یقین سے نہیں کہی جا سکتی کہ آیا امریکا پاکستان کے لیے تین سو ملین ڈالر کی فوجی امداد جاری کرے گا یا نہیں۔ میڈیا رپورٹوں کے مطابق اگر امریکا اس نتیجے پر پہنچا کہ پاکستان حقانی نیٹ ورک کے خلاف ناکافی اقدامات کر رہا ہے تو اس کو ممکنہ طور پر ملنے والی فوجی امداد روکی بھی جا سکتی ہے۔ نیوز ایجنسی روئٹرز کی معلومات کے مطابق یہ گروپ افغانستان میں ہونے والے بڑے اور خونریز حملوں میں ملوث ہے۔ تجزیہ کاروں کے مطابق سوزن رائس نے طالبان قیادت کے ساتھ ممکنہ امن مذاکرات کے سلسلے میں بھی پاکستانی حکام سے بات چیت کی ہو گی کیونکہ امریکا بھی کابل حکومت اور طالبان کے مابین ممکنہ امن مذاکرات میں پاکستانی مدد حاصل کرنے میں دلچسپی رکھتا ہے۔ ان امن مذاکرات کا مقصد افغانستان میں جاری چودہ سالہ جنگ کا خاتمہ کرنا بتایا گیا ہے۔ حالیہ ہفتوں میں مذاکرات کا یہ سلسلہ اس وقت منقطع ہو گیا تھا، جب طالبان کے سابق رہنما ملا عمر کے انتقال کی خبریں سامنے آئی تھیں

Advertisements

Leave a Reply

Fill in your details below or click an icon to log in:

WordPress.com Logo

You are commenting using your WordPress.com account. Log Out / Change )

Twitter picture

You are commenting using your Twitter account. Log Out / Change )

Facebook photo

You are commenting using your Facebook account. Log Out / Change )

Google+ photo

You are commenting using your Google+ account. Log Out / Change )

Connecting to %s